Urdu Lyrics

Woh Sang-e-Giran Jo Haail Hain (Full Lyrics in Urdu)

Woh Sang-e-Giran Jo Haail Hain

(Full Lyrics in Urdu)

Woh Sang-e-Giran Jo Haail Hain Raste Se Hata Kar Dam Lenge
Hum Raah-e-Wafa Ke Rahro Hain Manzil Hi Pe Ja Kar Dam Lenge
Yeh Baat Ayaan Hai Duniya Par Hum Phool Bhi Hain Talwar Bhi Hain
Ya Bazm-e-Jahan Mehkaayenge Ya Khoon Mein Naha Kar Dam Lenge

Hum Ek Khuda Ke Qail Hain Pindaar Ka Har But Todenge
Hum Haq Ka Nishaan Hain Duniya Mein Baatil Ko Mita Kar Dam Lenge
Har Simt Machalti Kirnon Ne Afsoon-e-Shab-e-Gham Tod Diya
Ab Jaag Uthe Hain Deewane Duniya Ko Jaga Kar Dam Lenge

Jo Seena-e-Dushman Chaak Kare Baatil Ko Mita Kar Khaak Kare
Yeh Roz Ka Qissa Pak Kare Woh Zarb Laga Kar Dam Lenge
Yeh Fitna O Shar Ke Parwarda Takhreeb Ke Saaman Laakh Karein
Hum Bazm Sajane Aaye Hain Hum Bazm Saja Kar Dam Lenge

Ab Aag Na Jalne Paaye Gi Namrood Sift Ayyaron Ki
Hum Rehmat-e-Haq Se Sholon Ko Gulzar Bana Kar Dam Lenge
Firaun Bane Jo Phirte Hain Dhaate Hain Sitam Kamzoron Par
Un Sarkash O Jabar Logon Ko Qadmon Pe Jhuka Kar Dam Lenge

Har Ism Ke But Ko Todenge Islam Se Rishta Jodenge
Baatil Ko Mita Kar Chhodenge Islam Ko La Kar Dam Lenge
Allah Ki Rehmat Se Kaifi Dam Tod Chuki Hai Taareeki
Halka Sa Dhandhlaka Baqi Hai Is Ko Bhi Mita Kar Dam Lenge

 

Woh Sang-e-Giran Jo Haail Hain (Urdu Lyrics)

 

وہ سنگِ گراں جو حائل ہیں رستے سے ہٹا کر دم لیں گے
ہم راہِ وفا کے رہرو ہیں منزل ہی پہ جا کر دم لیں گے
یہ بات عیاں ہے دنیا پر ہم پھول بھی ہیں تلوار بھی ہیں
یا بزمِ جہاں مہکائیں گے یا خوں میں نہا کر دم لیں گے

ہم ایک خدا کے قائل ہیں پندار کا ہر بت توڑیں گے
ہم حق کا نشاں ہیں دنیا میں باطل کو مٹا کر دم لیں گے
ہر سَمت مچلتی کرنوں نے افسونِ شب غم توڑ دیا
اب جاگ اٹھے ہیں دیوانے دنیا کو جگا کر دم لیں گے

جو سینۂِ دشمن چاک کرے باطل کو مٹا کر خاک کرے
یہ روز کا قصہ پاک کرے وہ ضرب لگا کر دم لیں گے
یہ فتنہ و شر کے پروردہ تخریب کے ساماں لاکھ کریں
ہم بزم سجانے آئے ہیں ہم بزم سجا کر دم لیں گے

اب آگ نہ جلنے پائے گی نمرود صفت عیّاروں کی
ہم رحمت حق سے شعلوں کو گلزار بنا کر دم لیں گے
فرعون بنے جو پھرتے ہیں ڈھاتے ہیں ستم کمزوروں پر
ان سرکش و جابر لوگوں کو قدموں پہ جھکا کر دم لیں گے

ہر ازم کے بت کو توڑیں گے اسلام سے رشتہ جوڑیں گے
باطل کو مٹا کر چھوڑیں گے اسلام کو لا کر دم لیں گے
اللّٰہ کی رحمت سے کیفیؔ دم توڑ چکی ہے تاریکی
ہلکا سا دھندلکا باقی ہے اس کو بھی مٹا کر دم لیں گے

 

Read More:

Follow Us On:

Pinterest | Facebook | Instagram | Twitter

Average Rating

5 Star
0%
4 Star
0%
3 Star
0%
2 Star
0%
1 Star
0%

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button