Site icon ISLAM KI DUNYA

پیشِ حق مژدہ شفاعت کا سناتے جائیں گے ​

پیشِ حق مژدہ شفاعت کا سناتے جائیں گے ​

پیشِ حق مژدہ شفاعت کا سناتے جائیں گے ​ –  نعت لیرکس

PAISH-E-HAQ MUZHDA SHAFA’AT KA SUNATAY JAAYAINGE

اَللّٰھُمَّ صَلِّ عَلٰی مُحَمَّدٍ وَّعَلٰٓی اٰلِ مُحَمَّدٍ کَمَا صَلَّیْتَ عَلٰٓی اِبْرَاھِیْمَ وَعَلٰٓی اٰلِ اِبْرَاھِیْمَ اِنَّکَ حَمِیْدٌ مَّجِیْدٌ

اَللّٰھُمَّ بَارِکْ عَلٰی مُحَمَّدٍ وَّعَلٰٓی اٰلِ مُحَمَّدٍ کَمَا بَارَکْتَ عَلٰٓی اِبْرَاھِیْمَ وَعَلٰٓی اٰلِ اِبْرَاھِیْمَ اِنَّکَ حَمِیْدٌ مَّجِیْدٌ

 
پیشِ حق مژدہ شفاعت کا سناتے جائیں گے ​
آپ روتے جائیں گے ہم کو ہنساتے جائیں گے​
دل نکل جانے کی جا ہے آہ کن آنکھوں سے وہ ​
ہم سے پیاسوں کے لئے دریا بہاتے جائیں گے​
کشتگانِ گرمیِ محشر کو وہ جانِ مسیح​
آج دامن کی ہو ادے کر جِلاتے جائیں گے​
ہاں چلو حسرت زدوں سنتے ہیں وہ دن آج ہے ​
تھی خبر جس کی کہ وہ جلوہ دکھاتے جائیں گے​
کچھ خبر بھی ہے فقیرو آج وہ دن ہے کہ وہ ​
نعمتِ خلد اپنے صدقے میں لٹاتے جائیں گے​
خاک افتادو بس اُن کے آنے ہی کی دیر ہے​
خود وہ گر کر سجدہ میں تم کو اٹھاتے جائیں گے​
وسعتیں دی ہیں خدا نے دامنِ محبوب کو ​
جرم کھلتے جائیں گے اور وہ چھپاتے جائیں گے​
لو وہ آئے مسکراتے ہم اسیروں کی طرف​
خرمنِ عصیاں پہ اب بجلی گراتے جائیں گے​
آنکھ کھولو غمزدودیکھو وہ گریاں آئے ہیں ​
لوحِ دل سے نقشِ غم کو اب مٹاتے جائیں گے​
سوختہ جانوں پہ وہ پُر جوشِ رحمت آئے ہیں ​
آبِ کوثر سے لگی دل کی بجھاتے جائیں گے​
پائے کوباں پل سے گزریں گے تری آواز ہر ​
رَبِّ سَلِّم کی صدا پر وجد لاتے جائیں گے​
سرورِ دیں لیجئے اپنے ناتوانوں کی خبر​
نفس و شیطاں سیّدا کب تک دباتے جائیں گے​
حشر تک ڈالیں گے ہم پیدائشِ مولیٰ کی دھوم​
مثلِ فارس نجد کے قلعے گراتے جائیں گے​
خاک ہو جائیں عدو جل کر مگر ہم تو رضا
دَم میں جب تک دَم ہے ذکر اُن کا سناتے جائیں گے​
 
Poet: Ala-Hazrat Imam Ahmed Raza Khan Brelvi
 
 
 
Comments
Exit mobile version