ISLAM KI DUNYA

میرا بادشاہ حسین ہے

میرا بادشاہ حسین ہے

میرا بادشاہ حسین ہے

MERA BADSHAH HUSSAIN HAI [MANQABAT-E-HAZRAT IMAM HUSSAIN R.A]

اَللّٰھُمَّ صَلِّ عَلٰی مُحَمَّدٍ وَّعَلٰٓی اٰلِ مُحَمَّدٍ کَمَا صَلَّیْتَ عَلٰٓی اِبْرَاھِیْمَ وَعَلٰٓی اٰلِ اِبْرَاھِیْمَ اِنَّکَ حَمِیْدٌ مَّجِیْدٌ

اَللّٰھُمَّ بَارِکْ عَلٰی مُحَمَّدٍ وَّعَلٰٓی اٰلِ مُحَمَّدٍ کَمَا بَارَکْتَ عَلٰٓی اِبْرَاھِیْمَ وَعَلٰٓی اٰلِ اِبْرَاھِیْمَ اِنَّکَ حَمِیْدٌ مَّجِیْدٌ

میرا بادشاہ حسین ہے میرا بادشاہ حسین ہے
 
شاہ است حسین، بادشاہ است حسین
دین است حسین، دین پناہ است حسین
سر داد، نداد دست درِ دست یزید
حقا کہ بنائے لا الہ است حسین
 
نہ پوچھیے کہ کیا حسین ہے نہ پوچھیے کہ کیا حسین ہے
میرا بادشاہ حسین ہے میرا بادشاہ حسین ہے
 

عمل کا رہنما بھی جو شاہوں کا ہے شاہ بھی
ایسا شہنشاہ حسین ہے

سنو سنو یہ دین تو حسین کا ہمیں انعام ہے
یہ بات کس قدر حسیں جو کہہ گئے معین الدیں
کہ دین کی پناہ حسین ہے

شہید وہ شہید ہے شہیدوں کو بھی جن پہ ناز ہے
یہ ہو چکا ہے فیصلہ نہ کوئی دوسرا خدا 

نہ کوئی دوسرا حسین ہے
 

دعاؤوں میں نواؤں میں اُنہیں وسیلہ جو بنائے گا
نہ راستے میں موڑ ہے نہ واسطے میں موڑ ہے 
ایسی سیدھی راہ حسین ہے

شہید کربلا کا نام جس کو ناگوار ہے
وہ بد نظر ہے بد نصب اُنہیں میں یہ شمار ہے
ارے اُو منکرِ ازل تو مر ذرا قبر میں چل
پتا چلے گا کیا حسین ہے

فنا کے بعد پھر مجھے نئی حیات مل گئی
عذاب سے عتاب سے مجھے نجات مل گئی
سوال جب کیا گیا ہے کون تیرا پیشوا
تو میں نے کہہ دیا حسین ہے

 

 

ﺳﯿـﺪﻧﺎ ﺣﻀﺮﺕ ﺍﻣﺎﻡ ﺣُﺴﯿـــــــــــﻥ رضی اللہ تعالٰی عنہ ﺍﻭﺭ ﺷﮭﺪﺍﺋﮯ ﮐﺮﺑﻼ ﮐﯽ ﻋﻈﻤـﺖ ﮐﻮ ﺳــﻼﻡ – ﺳـــــــﻼﻡ ﯾﺎ ﺣُﺴـــــــــــــﯿﻦ

Comments
Exit mobile version